جسمانی حرکات (Body Movements) س ا س کی دنیا کے بارے میں انا سا ہے۔ اسے معلوم ہے کہ وہ ایک جگہ سے دوسری جگہ حرکت نہیں کرتے لیکن کیا ان میں کسی قسم کی حرکت ) مر سکون کی حالت میں بیٹھ جایئے۔ اپنے جسم ا۳) میں ہونے والی حرکات کا مشاہدہ ہے۔ آپ : وقت بہ وقت اپنی پلکوں کو جھکاتے ہیں۔ جب آپ سانس لیتے ہیں تو اس وقت جسم میں ہونے والی حرکات کا مشاہدہ کیجیے۔ ہمارے جسم میں متعدد قسم کی حرکات ہوتی رہتی ہیں۔ جب آپ اپنی کاپی پر لکھتے ہیں تو اس وقت آپ کے جسم کا کون سا حصہ حرکت کرتا ہے؟ یا جب مڑ کر آپ اپنے دوست کی طرف دیکھتے ہیں؟ ان مثالوں میں جب آپ ایک ہی جگہ پر ہوتے ہیں تو بھی آپ کے جسم کے مختلف حصے حرکت میں ہوتے ہیں۔ آپ ایک جگہ سے دوسری جگہ کے لیے بھی حرکت کرتے ہیں۔ آپ اٹھتے ہیں اور اپنے استاد محترم کے پاس جاتے ہیں یا اسکول کے میدان کی طرف جاتے ہیں یا اسکول کی چھٹی کے بعد گھر جاتے ہیں۔ آپ ٹہلتے ہیں، دوڑتے ہیں، کودتے ہیں اچھلتے ہیں اور ایک جگہ سے دوسری جگہ کے لیے حرکت کرتے ہیں۔ آیئے دیکھتے ہیں کہ جانور ایک جگہ سے دوسری جگہ کس طرح آتے جاتے ہیں۔ اس کے لیے اپنے دوستوں، اساتذہ اور والدین سے بات چیت کچھے اور جدول 8 . 1 کو جدول 8 . 1 جانور ایک جگہ سے دوسری جگہ کس طرحرکت کرتے ہیں؟ جانور ایک جگہ سے دوسری جگہ حرکت کے جانورکس طرح | لیے استعال ہونے والا جسمانی حصہ حرکت کرتے ہیں؟ گائے مانگیں چل کر انسان | | سانپ مچھلی چلنا، دوڑنا، اڑنا، کودنا، رینگنا، گھٹنا، پھسلنا اور تیرنا ۔ یہ چھ ایسے طریقے ہیں جن کے ذریعے جانور ایک جگہ سے دوسری پر کھیے۔ جگہ حرکت کرتے ہیں۔ جانوروں کے ایک جگہ سے دوسری جگہ حرکت کرنے کے طریقے میں اتنا فرق کیوں ہے؟ ایا کیوں ہے کہ کچھ جانور چلتے ہیں جبکہ سانپ پھسل کر چلتا ہے بارینگتا ہے اور بھی تیری ہے؟ 8 . 1 انسانی جسم اور اس کی حرکات جانوروں میں ہونے والی مختلف قسم کی حرکات پر غور کرنے سے پہلے آیئے ہم اپنی حرکات کا قریب سے مشاہدہ کرتے ہیں۔ کیا آپ نے اسکول میں کثرت کرنے کا لطف اٹھایا ہے؟ جب مختلف قسم کی مشقیں کرتے ہیں تو آپ اپنے ہاتھ جدول اور پیروں کو کس طرح حرکت دیتے ہیں؟ آئے ایک چھ حرکات پر غور کرتے ہیں جو ہمارے جسم کے ذریعے دی جاسکتی ہیں۔ کسی خیالی گیند کو ایک خیالی وکٹ پر بھی کیے۔ آپ اپنی بازو کو کس طرح حرکت دیتے ہیں؟ کیا آپ نے اسے اپنے کاندھے پر داری حرکت دی؟ کیا آپ کا کاندھا بھی حرکت کرتا ہے؟ نیچے لیٹ جایئے اور کولہے پر اپنی ٹانگ کو گھمایئے۔ اپنی بازو کو کہانی پر موڑ پئے اور ٹانگ کو گھٹنے پر موڑیئے۔ اپنی بازو کو پہلو کی جانب پھیلایئے۔ اپنے بازو کو موڑ کر اپنی انگلیوں سے کاندھے کو مس کیے۔ آپ نے بازو 8 . 2 مکمل طور پر گھومتا ہے جزوی طور پرگھومتا ہے مرتا ہے جلتا ہے | القا ہے بالکل بھی حرکت نہیں کرتا | گردن ا لو پاؤں کی انگلیاں | | : | : أ 80 لاتنس طرف موڑنے کی کوشش کیا کر دینے کی کوشش کاند ی وں کی مدد سے دبائیے۔ کے کس حصے کو موڑا ہے؟ اپنی بازو کو پھیلانے اور نیچے کی طرف موڑنے کی کوشش کیجیے۔ کیا آپ ایسا کر سکتے ہیں؟ اپنے جسم کے مختلف حصوں کو حرکت دینے کی کوشش کچھے اور ان کی حرکات کو جدول 8 . 2 میں نوٹ کیجے۔ کیا وجہ ہے کہ ہم اپنے جسم کے کچھ حصوں کو مختلف سمتوں میں باآسانی حرکت دے سکتے ہیں جبکہ کچھ حصوں کو صرف ایک ہی سمت میں حرکت دے پاتے ہیں؟ ہم اپنے جسم کے کچھ حصوں کو قطع حرکت نہیں دے پاتے کیوں؟ عملی کام1 پکانے کو اپنے بازو پر اس طرح رکھیے کہ آپ کی منی پلانے کے درمیان میں رہے (شکل 8 . 1)۔ اب اپنے دوست سے کہے کہ وہ پیانہ اور آپ کے بازو کو ایک ساتھ باندھ دے۔ اب اپنی ہی س م کو موڑنے کی کوشش ہے۔ کیا آپ ایا شکل 8 . 1 کیا اب " کر پاتے ہیں؟ سکتے هیں کیا آپ نے دیکھا کہ ہم اپنے جسم کو ان جگہوں پر موڑ سکتے ہیں یا گھما سکتے ہیں جہاں جسم کے دو حصے ایک دوسرے سے جڑے رہتے ہیں۔ مثلا کونی، کاندھا یا گردن؟ بیج ہمیں جوڑ (Joints) کہلاتی ہیں۔ کیا آپ کچھ اور جوڑوں کے نام بتا سکتے ہیں؟ اگر آپ کے جسم میں کوئی بھی جوڑ نہ ہوتا تو کیا آپ سمجھتے ہیں کہ کسی طرح ہمارے لیے حرکت کر پا نا ممکن ہوتا؟ | جسمانی حرکات ان جوڑوں پر درحقیقت کیا چیز بڑی ہوتی ہے؟ اپنے سر کے بالائی حصے، چہرے، گردن، ناک، کان، کاندھے کے پچھلے حصے، ہاتھ اور ٹانگوں (انگلیوں اور انگوٹھے سمیت) کو انگلیوں کی مدد سے دبائے۔ انگلی سے دبانے پر کیا آپ کو کسی سخت چیز کا احساس ہوتا ہے؟ یسخت جانتیں ہڈیاں (Bones) ہیں۔ اس عمل کو جسم کے دوسرے حصوں کے ساتھ دہرایئے۔ کتنی ساری ہڈیاں! ہڈیوں کو موڑ نہیں سکتے۔ تو پھر ہم اپنی کہنی کو کس طرح موڑ لیتے ہیں؟ یہ بازو کے اوپر حصے سے لے کر ہماری کلائی تک صرف ایک ہڈی نہیں ہے بلکہ کہانی پر مختلف ہڈیاں ایک دوسرے سے جڑی ہوئی ہیں۔ اسی طرح ہمارے جسم کے ہر ایک حصے میں کئی ہڈیاں موجود ہوتی ہیں۔ ہم اپنے جسم کو صرف ان جگہوں پر حرکت دے سکتے ہیں یا موڑ سکتے ہیں جہاں ہڈیاں آپس میں ملتی ہیں۔ مختلف حرکات اور سرگرمیوں کو انجام دینے کے لیے ہمارے جسم میں مختلف تم کے جوڑ ہوتے ہیں۔ آیئے ان میں سے کچھ جوڑوں کا مطالعہ کرتے ہیں۔ آپ اپنی بازو موڑ بال اور سا کٹ جوڈ (Ball and Socket Joints) کا کام2 کاغذ کو سلنڈر کی شکل میں موڑ لیے۔ کسی پرانی ربر یا پلاسٹک کی گیند میں ایک سوراخ کے (کسی کی نگرانی میں اور کاغذ کے 81 شکل 8 . 2 بال اور ساکٹ جوڑ بنانا سلنڈر کو اس سوراخ میں داخل کیے جبیا که شكل 8 . 2 میں دکھایا گیا ہے۔ آپ سلنڈر کو گیند کے اوپر چکا بھی سکتے ہیں۔ گیند کو ایک چھوٹے سے کٹورے میں رکھے۔ کیا کٹورے کے اندر گیند آزادانہ طور پر گھوم جاتی ہے؟ کیا کاغذ کا سلنڈر بھی گھومتا ہے؟ نے اب کاغذ کے سلنڈر کو اپنی بازو اور گیند کو اس کا سرا : تصور کیے۔ گیند کاندھے کے اس حصے کی طرح ہے جس سے آپ کی باز و جڑی ہوئی ہے۔ ایک ہڈی کا گول سرا دوسری ہڈی کے جوف (Cavity) میں پھنسا رہتا ہے (شکل 8 . 3)۔ اس قسم کے جوڑ بھی سمتوں میں حرکت کر سکتے ہیں۔ اس سین کی ابتدا میں ہم نے تم کی مختلف حرکات کو منع کیا تھا، اس جانکاری کی مدد سے کیا آپ اس قسم کے کسی اور جوڑ کا نام بتا سکتے ہیں؟ خصوں جوڑ (Pivotal Joint) وہ جوڑ جہاں پر ہماری گردن اور سر ایک دوسرے سے جڑے ہوئے ہیں وہ خصوص جوڑ کہلاتا ہے۔ اس سے ہمارا سرآگے پچھے اور دائیں بائیں حرکت کر سکتا ہے۔ ان حرکات پر غور ہے۔ یہ جوڑ ہماری بازو کے اس جوڑ سے کس طرح مختلف ہیں جو کہ اپنے بال اور ساکٹ جوڑ میں ایک مکمل دائرے میں ھوم جاتی ہے؟ خصو جوڑ میں اسطوانی ہڈیاں ایک چھلے کے اندر وی ہیں۔ بشه دار جوڑ (Hinge Joint) کئی مرتبہ دروازے کو کھولیے اور بند کیے۔ دروازے کے . . . و قبضوں کا بغور مشاہدہ کیجیے۔ یہ دروازے کو آگے پیچھے حرکت دینے میں مدد کرتے ہیں۔ " کام 3 اپنے قبضے کے ذریعے دی جانے والی حرکت کا مشاہدہ کرتے ہیں۔ موٹے حارط پیر یا گتے کی مدد سے ایک سلنڈر بنا ہے بیا که شکل اس ش 8 . 4 و میں کیا میں دکھایا گیا ہے۔ ایک چھوٹی سی پنسل کو سلنڈر کے درمیانی حصے میں پھنسا دیکھے جیسا کہ دکھایا گیا ہے۔ گئے کی مدد سے ایک ایسا کھوکھلا نصف سلنڈر بنائے تا کہ پہلا سلنڈر اس کے اندر آسانی سے فٹ ہو سکے۔ کھوکھلا نضف سلنڈر اپنے اندر رکھے گئے پہلے والے سلنڈر کو قبضے کی طرح حرکت کرنے کا اہل بناتا ہے۔ پہلے والے سلنڈر کو گھمانے کی کوشش کیجیے۔ یہ کس طرح حرکت کرتا ہے؟ کیا یہ حرکت اس حرکت سے مختلف ہے جو ہم نے اپنے بنائے ہوئے بال اور شکل 8 . 3 بال اور ساکٹ جوڑ 82 سائنس شکل 8 . 4 قبضه جيسے جوڑ کے ذریعے حرکت کی سمت ساکٹ جوڑ میں دیکھی تھی؟ اس قسم کی حرکت کو ہم نے ملی کام 1 میں اپنی منی میں دیکھا تھا۔ شکل 8 . 4 میں جو کچھ بھی ہم نے بنایا ہے وہ بلاشبہ قبضے سے مختلف ہے، مگر یہ اس سمت کو ظاہر کرتا ہے جس سمت میں قبضہ حرکت کی اجازت دیتا ہے۔ ہن میں قبضہ دار جوڑ ہوتا ہے۔ جس سے ہنی صرف آگے اور بھی حرکت کرسکتی ہے (شکل 8 . 5 )۔ کیا آپ اس سم کے جوڑوں کی کچھ اور مثالوں کے بارے میں سوچ سکتے ہیں؟ نہیں کرسکتیں۔ اس قسم کے جوڑ مستقل جوڑ کہلاتے ہیں۔ جب آپ اپنا منہ کھولتے ہیں تو آپ اپنا نچلا جڑا اپنے سر سے دور لے جاتے ہیں۔ کیا ایسا نہیں ہے؟ اب اپنے اوپر جبڑے کو حرکت دینے کی کوشش کیجیے۔ کیا آپ اسے حرکت دے سکتے ہیں؟ اور جبڑے اور باقی سر کے درمیان ایک جوڑ ہوتا ہے جو کہ مستقل جوڑ ہے۔ ہم کیسے جوڑوں پر بحث کی ہے جو ہمارے بسم کے حصوں کو ایک دوسرے سے جوڑتے ہیں۔ کس وجہ سے جسم کے مختلف حصوں کی شکل مختلف ہوتی ہے؟ اگر آپ ایک گڑیا بنانا چاہتے ہیں تو سب سے پہلے کون سا حصہ بنائیں گے؟ اس کے بیرونی ڈھانچے کو بنانے سے پہلے گڑیا کو شکل عطا کرنے کے لیے شاید سب سے پہلے فریم ورک تیار کریں گے کیا ایسا نہیں ہے؟ ہمارے جسم کی تمام not be rep شکل 8 . 5 گھٹنے کا قبضه نما جوڑ مستقل جوڑ (Fixed Joint) | ہمارے سر میں کچھ ایسی ہڈیاں ہیں جو کہ چھ جوڑوں پر ایک دوسرے سے جڑی ہوئی ہیں۔ ہڈیاں ان جوڑوں پر حرکت شکل 8 . 6 انسانی پنجر جسمانی حرکات 83 ہڈیوں کی تعداد کا پتہ لگانے کی کوشش کیے۔ اس طرح اپنے تھے (Ankle اور گھٹنے کے جوڑوں کی ہڈیوں کو محسوس کیجیے اور ان کا موازنہ ایکس رے شبہہ سے کچے (شکل 8 . 7)۔ اپنی انگلیوں کو موڑ پئے۔ کیا آپ انہیں ہر ایک جوڑ پر موڑ سکتے ہیں؟ آپ کی درمیانی انگلی میں کتنی ہڈیاں ہیں؟ اپنی اسمبلی کے پچھلے حصے کو محسوس کیے۔ یہاں کی ہڈیاں معلوم ہوتی ہیں، کیا ایسا نہیں ہے (شکل 8 . 8)؟ کیا آپ کی کلائی پکدار ہے؟ یہ بہت سی چھوٹی چھوٹی ہڈیوں سے مل کر بنی ہے۔ اگر اس میں صرف ایک ہی ہڈی ہوتو کیا ہوگا؟ ہڈیاں بھی ایک فریم ورک تشکیل دیتی ہیں جس سے ہمارے جسم کو ایک شکل عطا ہوتی ہے۔ یہ فریم ورک ڈھانچہ (Skeleton) کہلاتا ہے (شکل 8 . 6)۔ ہم یہ کس طرح پتے لگاتے ہیں کہ یہ ایک انسانی ڈھانچے کی شکل ہے؟ ہم اپنے جسم کی مختلف ہڈیوں کی شکل کے بارے میں کس طرح پہ لگاتے ہیں؟ ہم اپنے جسم کے کچھ حصوں کو چھو کر ان میں موجود ہڈیوں کی شکل اور تعداد کا تھوڑا بہت اندازہ لگا سکتے ہیں۔ اس شکل کے بارے میں زیادہ بہتر جانے کے لیے ہم انسانی جسم کی ایکسرے شبیہہ دیکھ سکتے ہیں۔ کیا آپ یا آپ کی فیملی میں سے کسی نے بھی آپ کے جسم کے کسی حصے کا ایکسرے کرایا ہے؟ بھی اتفاق سے میں چوٹ لگ جاتی ہے یا کوئی حادثہ پیش آجاتا ہے تو ڈاکٹر ایکسرے شبہے کا استعمال کر کے ہڈیوں میں لگنے والی چوٹ کا پتہ لگانے کی کوشش کرتا ہے۔ ایکس رے ہمارے جسم میں موجود ہڈیوں کی شکل کو ظاہر کرتا ہے۔ اپنی بازوں کے اگلے حصے ( ہنی سے کلائی تک)، اوپری حصے، ٹانگوں کے نچلے اور اوپر حصوں کو چھو کر ہڈیوں کو محسوں کیجیے۔ ہر ایک حصے میں لد شکل 8 . 8 هاتھ کی ھڈیاں عملی - گہری سانس لیجیے اور اسے تھوڑی دیر تک روکے۔ اپنے سینے اور پیٹھ کے درمیانی حصے کو ایک ساتھ آہستہ سے دبا کر سینے اور پیٹھ کی ہڈیوں کو محسوس کیے۔ جتنی زیادہ سے زیادہ ممکن ہوں پسلیوں (Ribs) کو شمار کیے۔ شكل 8 . 9 کو غور سے دیکھے اور اس کا موازنہ اپنے سینے کی ان ہڈیوں سے کیے جنہیں آپ نے محسوس کیا ہے۔ ہم دیکھتے ہیں کہ پسلیاں کان مڑی ہوئی ہوتی ہیں۔ یہ سینے کی سائنس شكل 8 . 7 گھٹنے اور ٹخنے کے جوڑوں کی ایکسرے شبيهه 84 ہڈی اور ریڑھ کی ہڈی کو ایک دوسرے سے جوڑ کر ایک بس کی تشکیل کرتی ہیں جسے Rib Cage کہتے ہیں۔ ہمارے جسم کے کچھ اندرونی اعضا اس نیچر میں محفوظ رہتے ہیں۔ اپنے دوست سے کہیے کہ وہ اس طرح کھڑا ہوجائے کہ اس کے ہاتھ دیوار کو دبا رہے ہوں۔ اس سے کہے کہ وہ دیوار کو دبانے کی کوشش کرے۔ کیا آپ کو اس کے کاندھوں پر دو ہڈیاں کھڑی ہوئی نظر آتی ہیں؟ یہ ہڈیاں کاندھے کی ہڈیاں (Shoulder Bones) کہلاتی ہیں (شکل 8 . 11)۔ شكل 8 . 9 پسلیاں شکل 8 . 11 کاندھے کی ھڈیاں اپنے دوست سے کہیے کہ وہ اپنے گھٹنے کو بغیر موڑے شکل 8 . 12 کا غور سے مشاہدہ کیجیے۔ یہ ساخت ہوئے پیر کے انگو ٹھے کو چھوئے۔ اپنی انگلیوں کو اس کی پیٹھ کے :Pelvic Bones کہلاتی ہے۔ یہ آپ کے جسم کے پیٹ مرکز میں رکھے۔ کیا آپ کسی سخت اور می کی سے نیچے کے حصے کی گھیرا بندی کیے رہتی ہیں۔ یہ وہ حصہ ہے ساخت کو محسوس کرتے ہیں؟ گردن سے جس کے اوپر آپ بیٹھتے ہیں۔ شروع کرتے ہوئے اپنی انگلیوں کو اپنے دوست کی پیٹھ پر نیچے کی طرف لے جایئے۔ یہاں جس چیز کو آپ محسوس کرتے ہیں وہ ریڑھ کی ہڈیاں (Backbone) کہلاتی ہے۔ یہ بہت چھوٹی چھوٹی ہڈیوں سے مل کر بنی ہوتی ہے (شکل 8 . 10) شکل 8 . 12 کولھے کی ھڈیاں RbCageان ہڈیوں سے جڑا رہتا ہے۔ کھوپڑی Skull) کی ہڈیوں سے بنی ہوتی ہے جو اگر آپ کے دوست کی ریڑھ کی ایک دوسرے سے جڑی رہتی ہیں (شکل 8 . 13)۔ اس کے ہڑی صرف ایک بھی ہڈی پر مشتمل ہوتی تو شكل 8 . 10 اندر ہمارے جسم کا ایک بہت اہم حصہ محفوظ رہتا ہے جسے کیا آپ کا دوست جھک سکتا تھا؟ ریڑه کی هذی دماغ (Brain) کہتے ہیں۔ جسمانی حرکات الأثلث بزنید كل 85 rrrr اللللا ها - شكل 8 . 13 انسانی کھوپڑی ہم نے اپنے ڈھانچے کی بہت سی ہڈیوں اور جوڑوں پر بحث کی ہے۔ ڈھانچے کے کچھ اور اضافی حصے بھی ہیں جو کہ ہڈیوں کی طرح سخت نہیں ہیں اور مڑ سکتے ہیں۔ بی غضروف (Cartilage) کہلاتے ہیں۔ اپنے کان کو چھو کر مسوں کھیے۔ کیا آپ ہڈی جیسی سخت کسی ایسی ساخت کو محسوس کرتے ہیں جسے موڑ سکتے ہیں (شکل 8 . 14 )۔ یہاں کوئی بڑی نظر نہیں آتی ۔ کیا ایسا نہیں ہے؟ کیا آپ کو کان کی لو اور اس کے اوپر والے حصے کے درمیان کوئی مختلف چیز نظر آتی ہے (شکل 8 . 15) جب آپ تھیں انگلیوں کے درمیان میں دباتے ہیں؟ آپ کان کے اوپری حصے میں کچھ ایسا محسوس کرتے ہیں جو کہ کان کی لو کی طرح ملائم نہیں ہے لیکن ہڈی کی طرح سخت بھی نہیں ہے۔ کیا ایسا نہیں ہے؟ یہ غضروف ہے۔ غضروف جسم کے جوڑوں میں بھی پایا جاتا ہے۔ ہم نے دیکھا کہ ہمارا ڈھانچہ بہت کی ہڈیوں، جوڑوں اور غضروف سے بنا ہے۔ ان میں سے کچھ کو آپ دیکھ سکتے ہیں، موڑ سکتے ہیں اور حرکت دے سکتے ہیں۔ اپنی کاپی میں ڈھانچے کی صاف ستھری شکل بنایئے۔ ہم اپنے جسم میں پائی جانے والی ہڈیوں اور جوڑوں کے بارے میں سیکھ چکے ہیں جو مختلف قسم کی حرکات میں ہماری مدد کرتے ہیں۔ ہڈیوں کو حرکت کرنے کا اہل کون بناتا ہے؟ آیئے پتہ لگاتے ہیں۔ ایک ہاتھ سے بھی بنایئے۔ اپنی بازوں کو ہنی پر موڑ پینے اور انگوٹھے کی مدد سے کاندھے کو مس (Touch) بچے (شکل 8 . 16)۔ کیا آپ کو اپنی بازو کے اوپری حصے = == (b) در این شکل 8 . 15 کان کی لو شکل 8 . 14 کان کے اوپری حصے میں غضروف هوتا هے شكل 8 . 16 هڈی کو حرکت دینے میں دو عضلات ایک ساتھ کام کرتے هیں 86 لاتنس 8 . 2 ’’جانوروں کے چلنے کا اندا‘‘ ہے کیچوا (Earth Worm) سگری5 کسی باغ میں مٹی پر چلتے ہوئے کچھوے کا مشاہدہ کیجیے۔ اسے احتیاط سے اٹھا کر کسی فلٹر پیپر یا جازب پیپر کے اوپر رکھے۔ ست اس کی حرکت کا مشاہدہ کیجیے (شکل 8 . 17)۔ اس کے بعد سے کسی کے کانچ کی پلیٹ یا چلنے والی سیٹ پر رکھے۔ اب اس کی حرکت کا مشاہدہ کھیے۔ کیا یہ کاغذ کے اوپر والی حرکت سے مختلف ہے؟ کیا آپ دیکھتے ہیں کہ بچو سخت اور پھسلواں من پرآسانی سے حرکت کر پاتا ہے؟ میں کسی قسم کی تبدیلی نظر آتی ہے؟ اسے دوسرے ہاتھ سے مس ہے۔ کیا آپ کو بازو کے اوپری حصے میں کچھ پھولا ہوا نظر آتا ، ہے؟ یہ عضلات (Muscles) ہیں۔ سڑنے کی وجہ سے عضلات ابھر آتے ہیں ان کی لمبائی کم ہوجاتی ہے)۔ اب اپنی بازو کو اس کی اصل حالت میں واپس لائے۔ عضلات کا کیا ہوتا ہے؟ کیا یہ ابھی بھی سکڑی ہوئی حالت میں ہے؟ جب آپ چلتے ہیں یا دوڑتے ہیں تو اس وقت بھی اپنی ٹانگوں میں اسی قسم کی سکڑن کا مشاہدہ کر سکتے ہیں۔ سکڑنے پر عضلات چھوٹے ، سخت اور موٹے ہو جاتے ہیں۔ یہ ہڈیوں کو کھینچتے ہیں۔ عضلات جوڑوں (Pairs کی شکل میں کام کرتے ہیں۔ جب ان میں سے ایک سکڑتا ہے تو ہڈی کو اس سمت میں کھینچا جاتا ہے اور جوڑے کا دوسرا عضلہ آرام کی حالت میں ہوتا ہے۔ ہڈی کو مخالف سمت میں حرکت دینے کے لیے وہ عضلہ جو آرام کی حالت میں ہے ہڈی کو اس کی اصل حالت میں کھینچنے کے لیے سکڑ جاتا ہے اور پہلا آرام کی حالت میں آجاتا ہے عضلات کو صرف کھینچا جاتا ہے، دبایا نہیں جاسکتا۔ اس طرح دوعضلات ایک دوسرے کے ساتھ کام کر کے ہڈی کو حرکت دیتے ہیں (شکل 8 . 16)۔ کیا حرکت کے لیے ہمیشہ ہی ہڈیوں اور عضلات کی ضرورت ہوتی ہے؟ دیگر جانور کس طرح حرکت کرتے ہیں؟ کیا تجھی جانوروں میں ہڈیاں ہوتی ہیں؟ کچھوے اور گھونگھے کے بارے میں کیا خیال ہے؟ آیئے حرکت کرنے کے طریقے کا مطالعہ کرتے ہیں جو کہ کچھ جانوروں کے چلنے کا انداز ہے۔ جسمانی حرکات ) شکل 8 . 17 کیچوے کی حرکت چوے کا جسم متعدد چھلوں سے بنا ہوتا ہے جن کے میرے ایک دوسرے سے جڑے ہوتے ہیں۔ کیچوے میں ہڈیاں نہیں ہوتیں۔ اس میں عضلات پائے جاتے ہیں جن کی مدد سے جسم چھوٹا اور بڑا ہوسکتا ہے۔ حرکت کے دوران کچھوا سب سے پہلے اپنے جسم کے اگلے حصے کو پھیلاتا ہے اور چلا حصہ زمین پر مستقل رکھتا ہے۔ اس کے بعد اگلے حصے کو مستقل کرلیتا ہے۔ اور پچھلے حصے کو ریلیز کردیتا ہے۔ اس کے بعد یہ اپنے جسم کو چھوٹا کرلیتا ہے اور پچھلے حصے کو آگے کی طرف کھینچتا 87 ہے۔ ایسا کرنے سے تھوڑا سا فاصلہ طے کرتے ہوئے آگے کی طرف حرکت کرتا ہے۔ عضلات کے پھیلنے اور سکڑنے کے عمل کو دہرا کر کیچوا مٹی میں حرکت کرتا ہے۔ جسم سے خارج ہونے والا چکنا مادہ اسے حرکت کرنے میں مدد دیتا ہے۔ ہی اپنے جسم کے حصوں کو زمین پر کس طرح مستقل رکھتا ہے؟ اس کے جسم کے نیچے بہت بڑی تعداد میں بال جیسے ابھار ہوتے ہیں۔ یہ ابھار عضلات سے جڑے رہتے ہیں۔ ان ابھاروں کی مدد سے یہ زمین پر مضبوط پٹڑ بنا لیتا ہے۔ کچھوا دراصل اپنی غذا مٹی سے حاصل کرتا ہے۔ کھائی جانے والی غذا کے غیر ضم حصے کو یہ جسم سے باہر خارج کر دیتا ہے۔ کچھوے کے اس عمل سے مٹی پودوں کے لیے زیادہ کارآمد ہوجاتی ہے۔ ہے۔ خول ایک واحد اکائی ہے اور یہ ایک جگہ سے دوسری جگہ جانے میں مدد نہیں کرتا۔ اسے حرکت کی سمت میں گھسیٹا جاتا ہے۔ گھونگھے کو کسی کار کی پلیٹ میں رکھے اور اس کا مشاہدہ کیے۔ جب یہ حرکت کرنا شروع کر دے تو کانچ کی پیٹ کو گھونگھے سمیت اپنے سر کی اونچائی تک اھا ھے۔ اب نیچے سے اس کی حرکت کا مشاہدہ کیجیے۔ خول کے کھلے ہوئے حصے سے ایک موٹی سی ساخت اور سر باہر نکلتا ہے۔ موٹی ساخت اس کا پیر ہے جو کہ مضبوط عضلات کا بنا ہوتا ہے۔ اب ذرا احتیاط کے ساتھ کار کی پیٹ کوت چھا ھے۔ پیر کی لہر دار حرکت کو دیکھا جاسکتا ہے۔ کیا گھونگھے کی حرکت چوے کے مقابلے میں تیز ہے یا ست؟ کاکروچ عملی کام 7 کسی کاکروچ کا مشاہدہ کے (شکل 8 . 19)۔ گرگها (Snail) عملی کام6 عملی کام7 کسی باغ سے ایک گھونگھا لائے۔ کیا آ نے اس کی پیٹھ کے اوپر ایک گول ساخت بھی ہے (شکل 8 . 18)؟ شکل 8 . 18 گھونگها یہ اس کا حول (Shell) کہلاتا ہے۔ اور یہ گھونگھے کا بیرونی ڈھانچہ ہوتا ہے لیکن یہ ڈھانچہ ہڈیوں پرمشتمل نہیں ہوتا شکل 8 . 19 کاکروچ کاکروچ زمین پر چل سکتا ہے اور اوپر چڑھ سکتا ہے نیز ہوا میں اڑ بھی سکتا ہے۔ ان میں تین جوڑی ٹانگیں ہوتی سائنس 88 پیر (Forelimgs) پنکھوں کی شکل میں ہوتے ہیں۔ کاندھے کی ہڈیاں مضبوط ہوتی ہیں۔ چھاتی کی ہڈیاں اس انداز کی ہوتی ہیں کہ وہ اڑنے میں مدد کرنے والی عضلات (Flying Muscles) کو پڑے رہتی ہیں جن کا استعمال پٹھوں کو اوپر پنچ حرکت دینے میں کیا جاتا ہے (شکل 8 . 20)۔ پڑ رہی ہیں جن المحلات مل کر اوپر نی مچھلی (Fish) ہیں۔ جو اسے چلنے میں مدد دیتی ہیں۔ جسم بیرونی سخت ڈھانچے سے ڈھا رہتا ہے۔ یہ بیرونی ڈھانچ مختلف اکائیوں سے بنا ہوتا ہے جو ایک دوسرے سے جڑی رہتی ہیں اور اسے حرکت کرنے میں مدد دیتی ہیں۔ اس کی چھاتی سے دو چوڑی پنکھ (Wings) منسلک رہتے ہیں۔ کاکروچ میں مختلف قسم کے عضلات ہوتے ہیں۔ وہ عضلات جو ٹانگوں کے نزدیک ہوتے ہیں وہ چلنے کے لیے ٹانگوں کو حرکت دیتے ہیں۔ چھاتی کے عضلات اس کے پنکھوں کو حرکت دیتے ہیں جب یہ اڑتا ہے۔ پرندے (Birds) پرندے ہوا میں اڑتے ہیں اور زمین پر چلتے ہیں۔ کچھ پرندے مثالیں اور اس پانی میں تیر ھی سکتے ہیں۔ پرندے اڑ سکتے ہیں کیونکہ ان کا جسم اڑنے کے لیے نہایت موزوں ہوتا ہے۔ ان کی ہڈیاں کھولی اور ہلکی ہوتی ہیں۔ پچھلے پہر (Hind Limbs) چلنے اور سی شاخ وغیرہ پر بیٹھے (Perching) کے لیے نہایت موزوں ہوتے ہیں۔ اگلے عملی کام8 ایک کاغذ کی کشتی بنائے۔ اسے پانی میں رکھے اور اس کے ایک تنگ سرے کو آگے کی طرف رکھتے ہوئے ہلکا سا دبائے (شکل (a) 8 . 21)۔ کیا یہ پانی میں آسانی سے حرکت کرنے لگتی ہے؟ اب کشتی کو دونوں جانب سے پڑپینے اور چوڑی طرف سے پانی میں دھکیل دیے (شکل (6 8 . 21]۔ جب آپ نے اس طرف سے کشتی پر دھکا لگایا تو کیا یہ پانی میں حرکت کر پاتی ہے؟ ما می (a) (b) شکل 8 . 20 پرندے کا پنجر شکل 8 . 21 کشتی سے کھیلنا جسمانی حرکات 89 کیا آپ نے نوٹ کیا کہ شتی کی شکل کچھ کچھ پچھلی جیسی ہی ہے (شکل 8 . 22 )۔ مچھلی کا سر اور دم، اس کے جسم کے درمیانی حصے کے مقابلے میں چھوٹے ہوتے ہیں۔ جسم دونوں سروں پر پلا ہوتا ہے۔ یہ جسمانی شکل سیل خطی (Streamlined) کہلاتی ہیں۔ سر بر شکل 8 . 22 مچهلی شکل اس طرح کی ہوتی ہے کہ پانی اس کے چاروں طرف آسانی سے بہہ جاتا ہے اور پچھلی کو پانی کے اندر حرکت کرنے میں بدل جاتی ہے۔ مچھلی کا ڈھانچ مضبوط عضلات سے ڈھکا رہتا ہے۔ میر نے دوران عضلات جسم کے اگلے حصے کو ایک جانب خمیدہ کر دیتے ہیں اور دم والا حصہ دوسری جانب مڑ جاتا ہے۔ مچھلی کی شکل خمیدہ ہو جاتی ہے جیسا کہ شکل 8 . 23 میں دکھایا گیا ہے۔ اس کے بعد جسم اور دم بہت تیزی سے دوسری جانب خمیده شکل اختیار کر لیتے ہیں۔ اس سے جسم پر ایک جھٹکا لگتا ہے اور جسم کو آگے کی طرف دھکیل دیا جاتا ہے۔ جنگوں کا یہ سلسلہ چھلی کو آگے کی طرف تیرنے میں مدد کرتا ہے۔ اس کام میں دم کے زعے (Fins) مدد کرتے ہیں۔ مچھلی کے جسم کے اوپر دیگر اور بھی زحلقے ہوتے ہیں جو کہ تیرنے کے دوران جسم کو متوازن رکھنے اور سمت تبدیل کرنے میں مدد کرتے ہیں۔ کیا کبھی آپ نے نوٹ کیا ہے کہ پانی کے اندر غوطہ خور اپنے پیروں پر تھے جیسے فلپرس (Flippers پہنتے ہیں جس سے انہیں پانی کے اندر حرکت کرنے میں آسانی ہو جاتی ہے؟ | سائی کس طرح حرکت کرتے ہیں؟ | کیا آپ نے سانپ کو ہرا کر چلتے ہوئے دیکھا ہے؟ کیا یہ سیدھے راستے پر حرکت کرتا ہے (شکل 8 . 24)؟ سانپوں میں ایک ہی ریڑھ کی ہڈی ہوتی ہے۔ ان میں بہت سے پہلے عضلات موجود ہوتے ہیں۔ یہ عضلات ایک دوسرے سے منسلک رہتے ہیں حالانکہ یہ ایک دوسرے سے کافی فاصلے پر ہوتے ہیں۔ یہ ریڑھ کی ہڈی، پسلیوں اور جلد کو آپس میں منسلک کیسے رہتے ہیں۔ سانپ کا جسم نمیدہ ہو کر کئی لوپ بنا لیتا ہے۔ ہر ایک لوپ اسے زمین کی طرف دباتے ہوئے آگے کی طرف دھکیلتا ہے۔ کیونکہ اس کا لیا جسم کئی لوپ بنالیتا ہے اور ہر ایک لوپ اسے آگے کی طرف دھکیلتا ہے جس کی وجہ سے سانپ آگے کی طرف تیزی سے حرکت کرتا ہے لیکن سیدھے راستے پر ہیں۔ شکل 8 . 23 مچھلی میں حرکت 90 لاتنس شکل 8 . 24 سانپ میں حرکت ہم نے مختلف جانوروں میں حرکت کرنے کے لیے ہڈیوں اور عضلات کے استعمال کا مطالعہ کیا ہے۔ پہیلی اور بوجھو کے پاس جانوروں کی مختلف حرکات سے متعلق کئی سوالات ہیں۔ کیا آپ کے ذہن میں بھی کچھ اسی قسم کے سوالات اٹھ رہے ہیں جن کے جواب آپ کے پاس نہیں ہیں ۔ قدیم یونانی فلسفی ارسطو نے اپنی کتاب Gaits" "of Animal میں خود اپنے آپ سے یہ سوالات پوچھے ہیں۔ مختلف جانوروں میں ....................................... اور یہ جسمانی اعضا حرکت کرنے کے لیے جانوروں کی کس طرح مدد کرتے ہیں؟ مختلف جانوروں کے درمیان ان جسمانی اعضا میں کیا کیا فرق ہیں اور کیا یکسانیت ہے؟ مختلف جانوروں کو ایک جگہ سے دوسری جگہ جانے کے لیے کتنے جسمانی اعضا کی ضرورت ہوتی ہے؟ انسانوں میں دو ٹانگیں اور گائے یا بھینس میں چار ٹانگیں کیوں ہوتی ہیں؟ بہت سے جانوروں میں ٹانگوں کی تعداد جفت کیوں ہوتی ہے؟ ہماری ٹانگوں کے مڑنے کا انداز بازو سے مختلف کیوں ہے؟ بہت سارے سوالات ہیں اور شاید اس باب کے ملی کاموں کے ذریعے ہمارے کچھ سوالات کے جواب میں حاصل ہو گئے ہوں گے اور بہت سے سوالوں کے جواب ابھی تلاش کرنا باقی ہے۔ و در ای جسمانی حرکات 91 کلیدی الفاظ عضلات ریڑھ کی ہڈی بال اور ساکٹ جوڑ بطلیس غضروف بیرونی ڈھانچہ کولہے کی ہڈیاں مخصوص جوڑ جوف رب کی مستقل جوڑ کاندھے کی ہڈیاں جانوروں کے چنے کا انداز تھے دار جوڑ ڈھانچ سیل خطی خلاصه @ ہڈیاں اور غضروف انسانی ڈھانچ تشکیل دیتی ہیں۔ اس سے جسم کو فریم اور شکل عطا ہوتی ہے اور حرکت کرنے میں مددیتی ہے یہ اندرونی اعضا محفوظ رکھتا ہے۔ ڈھانچہ کھوپڑی، ریڑھ کی ہڈی، پسلیوں اور سینے کی ہڈیوں، کاندھے اور کولہے کی ہڈیوں نیز ہاتھ اور پیروں کی ہڈیوں پرمشتمل ہوتا ہے۔ : ہڈیوں میں حرکت، عضلات کے دو سیٹ کے متبادل طور پر سکڑنے اور پھر اپنی پہلی حالت میں واپس آنے کے تے میں ہوتی ہے۔ : ہڈیوں کے جوڑ کئی قسم کے ہوتے ہیں۔ جوڑ کی تم جوڑ کی نوعیت اور حرکت کی سمت پرمنحصر ہوتی ہے۔ مضبوط عضلات اور بلکی ہڈیوں کے ایک ساتھ مل کر کام کرنے کی وجہ سے پرندوں کو اڑنے میں مددملتی ہے۔ وہ اڑنے کے لیے اپنے پنکھوں کو اوپر چرکت دیتے ہیں۔ : مچھلیاں اپنے جسم کے دونوں جانب متبادل طور پرلوپ تشکیل دے کر تیرتی ہیں۔ 92 ات سانپ کا جسم لوپ تشکیل دے کر زمین پر لہرا کر چلتا ہے۔ ہڈیوں کی ایک بہت بڑی تعداد اور ان سے وابستہ فضلات جسم کو آگے کی طرف دھکیلتے ہیں۔ کاکروچ کا جسم اور بائیں سخت خول سے ڈھکی رہتی ہیں جسے بیرونی ڈھانچہ کہتے ہیں۔ چھاتی کے عضلات تین جوڑی ٹانگوں اور دو جوڑی پنکھوں سے منسلک رہتے ہیں جن کی وجہ سے کاکروچ کو چلے اور اڑنے میں مددمکتی : کچھوے عضلات کا استعمال کر کے جسم کو تبادل طور پر سکوڑ کر اور پھیلا کر حرکت کرتے ہیں۔ جسم کے نچلے حصے پر موجود بال نما ساختیں زمین پر پڑ بنائے رکھنے میں مدد کرتی ہیں۔ گھونگھے عضلاتی پیر کی مدد سے حرکت کرتے ہیں۔ 1۔ م ه ه مشقیں خالی جگہوں کو پر کیجیے۔ (a) ہڈیوں کے جو جسم کی میں مددکرتے ہیں۔ (b) ہڈیاں اور غضروف عمل کر جسم کا تشکیل دیتے ہیں۔ (0) کہنی پر ہڈیاں جوڑ کے ذریعے جڑی رہتی ہیں۔ (0) وکت کے دوران کے سکڑنے کی وجہ سے ہڈیاں کمپنی ہیں۔ مندرجہ ذیل بیانات کے سامنے یح یا غلط (F) لکھیے۔ (a) بھی جانوروں میں نقل و حرکت بالکل ایک جیسی ہوتی ہے۔ () (b غضروف ہڈیوں کے مقابلے سخت ہوتا ہے۔ () و انگلی کی ہڈیوں میں جو نہیں ہوتے۔ () (a) بازو کے اگلے حصے میں دو ہڈیاں ہوتی ہیں۔ ( ) (e) کاکروچ میں بیرونی ڈھانچہ پایا جاتا ہے۔ () 2۔ not to جسمانی حرکات 93 3۔ کالم و لا کالم کا مان کالم کے ایک یا زیادہ جملوں سے کیے کام اوپری جبڑا کے جسم میں زعے پائے جاتے ہیں۔ میں بیرونی ڈھانچہ ہوتا ہے۔ ہوا میں اڑسکتا ہے۔ غیرمتحرک جوڑ ہے۔ دل کی حفاظت کرتی ہیں۔ نہایت سست روی سے حرکت کرتا ہے۔ کا جسم میں خطی ہوتا ہے۔ مندرجہ ذیل کے جواب دیجیے۔ (a) بال اور ساکٹ جوڑ کیا ہوتا ہے؟ (b کھوپڑی کی کون کی ہڈیاں متحرک ہوتی ہیں؟ (2) ہماری ہی پیچھے کی طرف کیوں نہیں مڑ پاتی ہے؟ 4۔ قابل غور باتیں ہم نے ان تمام حرکات پر بحث کی ہے جو ہمارے جسم کے ذریعے انجام دی جاسکتی ہیں۔ ان تمام حرکات کے لیے صحت مند ہڈیاں، عضلات، جوڑ اور غضروف کی ضرورت ہوتی ہے۔ ہم میں سے کچھ لوگ ایسے حالات سے دوچار رہتے ہیں کہ ان حرکات کو انجام دے پانا آسان نہیں ہوتا۔ پوری کلاس اس عملی کام کو انجام دے اور ان طریقوں کا پتہ لگانے کی کوشش کیے جن کے ذریعے کوئی شخص اپنے روز مرہ کے کاموں کو انجام دینے کے لیے اس وقت استعمال کرتا ہے جب ہماری جسمانی حرکات میں سے کوئی ایک حرکت نامکن ہو۔ مثال کے طور پر ملی کام میں آپ نے اپنی بازو پر اسکیل باندھ دیا تھا اور کہنی کی حرکت پر پابندی عائد کر دی تھی۔ کچھ اور طریقوں کے بارے میں سوچھے جن کے ذریعے جسمانی حرکات پر بندش لگائی جا سکے اور پھر ان طریقوں کا پتہ لگانے کی کوشش کیے جن کے ذریعے روز مرہ کے کاموں کو انجام دیا جا سکے۔ 94 وان

RELOAD if chapter isn't visible.